GB NEWS ONE

A NETWORK OF GILGIT BALTISTSN

Windows


Breaking

Post Top Ad


عورتوں کے حقوق

May 28, 2018 0
عورتوں کے حقوق     از قلم: مہر علی شہاب                                                                                                ...
Read more »

پریس ریلیز

May 28, 2018 0
آرڈرز کی بجائے گلگت بلتستان کو آئینی صوبہ ڈکلیئر کیا جائے، شیعہ علماءکونسل پاکستان جب تک عوامی امنگوں کے مطابق فیصلے نہیں کئے جاتے، محرومیو...
Read more »

GB NEWS ONE

GB NEWS ONE

Churkah

Churkah

Shigar

Shigar

GB

GB

عورتوں کے حقوق

عورتوں کے حقوق

    از قلم: مہر علی شہاب    

                                                                                                           آج کل گلگت بلتستان میں مختلف نجی ادارے عورتوں کو ان کے حقوق دلانے کے بجاۓ ان کو بہکانے میں سر گرم عمل ھیں. عورت کو مردکے شانہ بشانہ چلنے میں ان کی مدد کررہے ھیں. ان کو سٹیج پہ رقص سے لے کر ڈول بجانا سکھایا جارہا ھے. ان کی عزت اور جن حقوق سے عورت محروم ھے ان پہ بات کرنے کیلے تیار نہیں . اگر ان لوگوں سے پوچھا جاۓ اپنی جو بہنیں ھیں ان کو جائداد سے حصہ کتنا دیا. تو کہنگے میں نے بہن کو رباب, ڈول گٹار, دمبک دف سب کچھ بجانا بھی سکھایا ھے اور خرید کے بھی دیے ھیں. خدارا اپنی بہن یا بیٹی کو مراسی کی تربیت نہ دیں بلکہ اس کو تعلیم, اور عزت دیں. اس ہاتھ میں قلم اور کتاب دیں. اس کو زندگی کے مشکلات سے سامنا کرنا سکھائیں. زندگی میں آگے بڑھنے کا حوصلہ دیں نہ کہ دوسروں کیلے عیاشی کے سامان بنائیں.اس کے لیے آرامدہ زندگی گزارنے کے سارے وسائل میسر کریں. جتنا فکر بیٹے کیلے کرتے ھیں اتنا بیٹی کیلے بھی کریں. بیٹا اور بیٹی میں کوئی فرق نہ کریں. اپنی بٹی کو وہ نہ بنائیں جو بیہودہ ھوکے اشتہارات کی زینت بنتی ھیں.

ان لڑکیوں کو بیوقوف بنایا جارہا ھے. کچھ خواتین بھی یہ سوچ کے مست ھیں کہ یہ چیزیں بجانے, سٹیج کی زینت بن کے ناچنے سے اور مرد کیلے عیاشی کے سامان بننے سے عورت مرد کے برابر ھوتی ھیں. بیٹا سنو یہ آپ کے حقوق کے منافی ھے. وگر نہ آپ کی مرضی اور سنو بیٹا بس یہی بجاتے رہنا اس کے پیچھے عورت کی ترقی ھے. اس کو بجانے سے عورت مرد کے برابر ھوتی ھے. اسی میں عورت کی ترقی و خوشحالی مضمر ھے. دنیا کے جتنے بھی معاشروں میں عورت نے ترقی کی ھے وہ دن رات ایک کرکے یہی چیز بجاتی رہی ھے تب جاکے چاند پر پہنچی اور سائنس کے میدان میں اپنا لوہا منوایا. عورت کے حقوق تب تک نہیں ملتے یا مرد کے برابر تب تک نہیں ھوتی جب تک دل و جان سے یہ چیزیں نہ بجائیں  

اب گلگت بلتستان کے عوام تمہاری غلامی برداشت نہیں کریں گے

                                                                                                        سینئر رہنما بی ایس ایف ممبر عوامی ایکشن کمیٹی
                                            مان لیتے ہیں تم گلگت بلتستان کو مکمل آئینی صوبہ نہیں بنا سکتے تو گلگت بلتستان کو کشمیر
                                                      طرز کا سیٹ اپ دو جس میں دفاع ، خارجہ اور کرنسی کے علاوہ تمام امور گلگت بلتستان کے 
                                                                                 پاس ہو یہ بھی نہیں کر سکتے تو اپنا بوریا بستر سمیٹو اور دفع ہو جاؤ۔
                                                                                     اب گلگت بلتستان کے عوام تمہاری غلامی برداشت نہیں کریں گے ۔۔
                                                                                                         سینئر رہنما بی ایس ایف ممبر عوامی ایکشن کمیٹی
                                                                                                             آصف ناجی ایڈوکیٹ کا کالا آرڈر 2018 کے
                                                                                                                               خلاف دھرنے سے خطاب

پریس ریلیز

آرڈرز کی بجائے گلگت بلتستان کو آئینی صوبہ ڈکلیئر کیا جائے، شیعہ علماءکونسل پاکستان
جب تک عوامی امنگوں کے مطابق فیصلے نہیں کئے جاتے، محرومیوں کا خاتمہ نہیں کیا جاسکتا، علامہ عارف واحدی
گلگت بلتستان کے عوام کو بنیادی و آئینی حقوق دیئے جائیں،شیعہ علماءکونسل پاکستان متحدہ اپوزیشن کے احتجاج کی حمایت کرتی ہے
راولپنڈی /اسلام آباد 28 مئی 2018ء ( ) شیعہ علماءکونسل پاکستان نے گلگت بلتستان آرڈر 2018ءکو مسترد کرتے ہوئے کہاہے کہ جب تک گلگت بلتستان عوام کو بنیادی و آئینی حقوق نہیں دیئے جاتے اس وقت تک ان کی محرومیوں کا ازالہ نہیں کیا جاسکتا، وزیراعظم سمیت وفاقی حکومت کو چاہیے کہ فی الفور آرڈر2018ءکی بجائے عوامی امنگوں کے مطابق آئینی صوبے کا اعلان کریں ، گلگت بلتستان کو دیگر صوبوں کی طرح سینیٹ اور قومی اسمبلی میں بھی نمائندگی ملنی چاہیے ۔ان خیالات کا اظہار انہوںنے گزشتہ روز وزیراعظم کی جانب سے گلگت بلتستان آرڈر 2018ءپر اپنے رد عمل اور عمائدین علاقہ سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ علامہ عارف حسین واحدی نے کہاکہ قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی واضح کہہ چکے کہ گلگت بلتستان آرڈر 2018ءناکافی حل ہے ہم عوام کے حقوق اور گلگت بلتستان کو آئینی صوبہ قرار دینے کا مطالبہ ایک عرصہ سے کررہے ہیں کیونکہ خطہ کی عوام کو باقاعدہ صوبائی شناخت دے کر ہی ان کے حقوق کا تحفظ کیا جاسکتاہے۔علامہ عارف حسین واحدی کا کہنا تھا کہ جب تک گلگت بلتستان کے عوام کو بنیادی و آئینی حقوق نہیں دیئے جاتے اس وقت ان کی محرومیوں کا ازالہ نہیں کیا جاسکتا، انہوںنے کہاکہ اس وقت پورے گلگت بلتستان کی عوام سراپا احتجاج ہے اور وہ مطالبہ کررہی ہے کہ انہیں ان کا آئینی حق دیا جائے،شیعہ علماءکونسل پاکستان متحدہ اپوزیشن کے احتجاج کی حمایت کرتی ہے ، انہوںنے کہاکہ وفاق کو عوامی امنگوں کے مطابق فیصلہ کرنا چاہیے ۔ ان کا کہنا تھا کہ جمہوری حکومت کا خاصا ہی عوامی امنگوں کے مطابق فیصلے کرنا ہوتاہے ۔ انہوںنے زور دیتے ہوئے کہاکہ گلگت بلتستان کو دیگر صوبوں کی طرح سینیٹ اور قومی اسمبلی میں نمائندگی ملنی چاہیے، عوام کے ان کے بنیادی ، جائز حقوق کےلئے ہم پہلے بھی آواز بلند کرتے رہے اور آئندہ بھی کرتے رہیں گے۔

متحدہ اپوزیشن اور عوامی ایکشن کمیٹی کی مشترکہ پریس کانفرنس

                                                                                                                                                                !گلگت

                                                                                                                                                          گلگت !
      متحدہ اپوزیشن اور عوامی ایکشن کمیٹی کی مشترکہ پریس کانفرنس , گورننس آرڈر 2009 اور 2018 عوام پر مسلط کئے گئے ہیں
               آرڈر 2009 سے 2018 قدرے بڑا آرڈر ہے , اگر گلگت بلتستان مسئلہ کشمیر کا فریق ہے تو طرز حکمرانی الگ کیوں ہے ,
                                                                    مکمل آئینی حقوق دینا اگر ممکن نہیں تو مقبوضہ کشمیر یا آزاد کشمیر طرز کا
                                                                                                         اختیار دیا جائے , تمام اضلاع کا دورہ کرینگے 
                                                                                                          اور آرڈر کے خلاف مربوط تحریک کا فیصلہ 

انڈیا بھی گلگت بلتستان کے حق بول پڑا

                                                     انڈیا بھی گلگت بلتستان کے حق بول پڑا

ہندوستان کو کوئی حق نہیں پہنچتا کہ وہ گلگت بلتستان کے اصلاحاتی پیکیج 2018 کی نفاذ کے خلاف احتجاج کرے ۔ 
ہندوستان والو تمہیں معلوم ہونا چاہئے 1947 میں گلگت بلتستان والوں نے تمہارے ڈوگرا راج کو ٹھکراتے ہوئے ڈوگرا فوج کو گلگت بلتستان سے 9،2،11 کر دیئے تھے. اور اپنی مرضی سے پاکستان میں شامل ہو گئے تھے. 
تجھے کیا حق پہنچتا ہے کہ تم گلگت بلتستان کا نام اپنی گندی زبان پر لائے. 
اگست 1947 سے اب تک ہندستان نے گلگت بلتستان کے 30 فیصد حصے پر نہ صرف ناجائز قبضہ کر رکھی ہے بلکہ سرحد کے پار سے آئے روز گلگت بلتستان پر بم اور گولیوں کا نہ ختم ہونے والا تحفہ بھیجتے رہتے ہیں۔ 
جس کے نتیجے میں اب تک اس علاقے کی ہزاروں لوگ بے گھر ہو چکے ہیں اور سینکڑوں سویلین شہید ہو چکے ہیں۔ بلخصوص بھارتی مسلمانوں اور کشمیریوں پر مظالم کے داستان ناقابل بیان ہیں-
لہذا ہم ہندوستان کی جانب سے اس ناجائز احتجاج کی سخت الفاظ میں مزمت کرتے ہیں.
ہندستان والو تم اپنے زبان کو لگام دو ورنہ این ایل آئی کے جوان کرگل آپریشن کی طرح تمہیں عبرتناک شکست دینے کے لئے تیار ہے.


Post Top Ad

Your Ad Spot

Pages